Pages

Thursday, November 17, 2011

Massive Ordnance Penetrator

The Massive Ordnance Penetrator (MOP) GBU-57A/B is a project by the U.S. Air Force to develop a massive, precision-guided, 30,000-pound (13,608 kg) "bunker buster" bomb. This is substantially larger than the deepest penetrating bunker buster presently available, the 5,000-pound (2,268 kg) GBU-28.

Massive Ordinance Penetrator


Massive Ordnance Penetrator, a program managed by the U.S. Air Force, is a large penetrating weapon with the ability to attack deeply buried and hardened bunkers and tunnels. The warhead case is made from a special high performance steel alloy. Its unique design maximizes explosive payload while maintaining the integrity of the penetrator case during impact.

MOP

Specifications

  • Length: 20.5 feet (6.2 m) 
  • Diameter: 31.5 inches (0.8 m) 
  • Weight: 30,000 pounds (14 metric tons)
  • Warhead: 5,300 pounds (2.4 metric tons) high explosive
  • Penetration:


The initial explosive test of MOP took place on March 14, 2007 in a tunnel belonging to the Defense Threat Reduction Agency (DTRA) at the White Sands Missile Range, New Mexico.

On October 6, 2009, ABC News reported that the Pentagon had requested and obtained permission from the U.S. Congress to shift funding in order to accelerate the project. It was later announced by the U.S. military that "funding delays and enhancements to the planned test schedule "meant the bomb would not be deployable until December 2010, six months later than the original availability date.
The project has had at least one successful Flight Test MOP launch.

On 7th April 2011, the USAF ordered eight MOPs plus supporting equipment for $28 million.

On November 14, 2011, Bloomberg reported that the Air Force Global Strike Command started receiving the Massive Ordnance Penetrator and that the deliveries "will meet requirements for the current operational need".




امریکی ہتھیاروں کے ذخیرے میں 15ٹن وزنی بم کااضافہ

واشنگٹن (اے ایف پی)امریکی فضائیہ نے تصدیق کی ہے کہ اس کے ہتھیاروں کے ذخیرے میں ایک نئے اور بہت بڑے بم کا اضافہ ہو گیا ہے،15 ٹن وزنی اور20 فٹ 
    لمبا یہ بم حال ہی میں امریکی فضائیہ کے حوالے کیا گیا ہے،میسیو آرڈیننس

 Massive Ordnance Penetrator

 نامی اس بم میں زیر زمین بنکرز کو تباہ کرنے کی غیر معمولی صلاحیت ہے جو کنکریٹ کی 60میٹرموٹی تہہ چیرکراپنے ہدف کونشانہ بنا سکتاہے،مبصرین کے مطابق ایران اورشمالی کوریااس بم کا نشانہ بن سکتے ہیں جنہوں نے اپنی جوہری تنصیبات زیر زمین قائم کررکھی ہیں،بی باون امریکی اسٹیلتھ جہازوں کے ذریعے یہ بم ہدف پر گرایا جائے گا اور سیٹلائٹ اس کی رہنمائی کرے گا۔ڈھائی ٹن دھماکہ خیز مواد کے ساتھ یہ بم پھٹنے سے پہلے کنکریٹ کی ساٹھ میٹر موٹی تہہ میں سوراخ کر کے اپنے ہدف تک پہنچ سکتا ہے،امریکی فضائیہ کے ترجمان لیفٹیننٹ کرنل جیک ملرکے مطابق 32ملین ڈالرکے اس سودے کے تحت امریکی کمپنی بوئنگ فضائیہ کو8ایسے بم فراہم کرے گی تاہم ترجمان نے یہ نہیں بتایاکہ اب تک کتنے بم ایئرفورس کے حوالے کئے گئے ہیں،مبصرین کے مطابق 
 ایران اورشمالی کوریاکے زیرزمین بنکرزاورسرنگوں کونشانہ بنانے کے حوالے سے اہم ہتھیارکے طورپردیکھا جا رہا ہے ۔ امریکاتواترکے ساتھ یہ کہتارہاہے کہ ایران اورشمالی کوریا نے فضائی حملوں سے بچانے کے لئے اپنی جوہری تنصیبات 
 زیرزمین قائم کررکھی ہیں۔



No comments:

Post a Comment